عذاب یہ بھی کسی اور پر نہیں آیا – افختار عارف

عذاب یہ بھی کسی اور پر نہیں آیا

کہ ایک عمر چلے اور گھر نہیں آیا

اس ایک خواب کی حسرت میں جل بجھیں آنکھیں

وہ ایک خواب کہ اب تک نظر نہیں آیا

کریں تو کس سے کریں نا رسائیوں کا گلہ

سفر تمام ہوا ہم سفر نہیں آیا

دلوں کی بات بدن کی زباں سے کہہ دیتے

یہ چاہتے تھے مگر دل ادھر نہیں آیا

عجیب ہی تھا مرے دور گمرہی کا رفیق

بچھڑ گیا تو کبھی لوٹ کر نہیں آیا

حریم لفظ و معانی سے نسبتیں بھی رہیں

مگر سلیقۂ عرض ہنر نہیں آیا

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *